ہاتھ میں نیزا لئے گھوڑا دوڑاتا یہ شخص نواب عطاء محمد خان ہے This person running a horse with a spear in his hand is Nawab Ata Muhammad Khan.

 ہاتھ میں نیزا لئے گھوڑا دوڑاتا یہ شخص نواب عطاء محمد خان ہے. جو 80 سال کی عمر تک گھوڑے کی پیٹھ پر رہا. دیکھنے میں ایک سفاک نواب لگتا  تھا مگر عملا ایسا نہیں تھا۔ ساری زندگی گھوڑ دوڑ ، نیزہ بازی اور  مشرقی روایات کے بہت بڑے فداکار رہے۔ ایچی سن اور آکسفورڈ کے زمانہ طالب علمی میں کلاس کی حد تک کوٹ پتلون پہنا اس کے علاوہ پوری زندگی شلوار قمیض اور پگ کے سوا کچھ نہ پہنا۔ خودجدی پشتی نواب ہی نہ تھے بلکہ نواب آف کالا باغ کے داماد بھی تھے۔ امریکہ، برطانیہ، فرانس، جرمنی. کنیڈا،ساؤتھ افریقہ اور بھارت گھوڑ سواری کے عالمی مقابلوں میں شرکت کے لئے گئے تو اسی وضع قطع میں گئے. آکسفورڈ سے گریجویشن میں گولڈ میڈلسٹ ہوگئے تو کانوکیشن میں اسی وضع قطع کے ساتھ پہنچ گئے. یونیورسٹی انتظامیہ نے ڈریس کوڈ کا اصول پیش کرکے لباس بدلنے کا کہا تو انکار کردیا. منیجمنٹ نے کہا "اگر یہی پہنے رکھنا ہے تو پھر ڈائس پر آکر ملکہ معظمہ سے گولڈ میڈل لینے نہیں دیا جائے گا. جواب دیا "تو نہ دیں گولڈ میڈل مگر لباس تو یہی رہے گا تقریب کے دوران میڈلز لینے والے طلبہ میں ان کا نام بھی پکارا گیا تو یہ اپنی نشست پر کھڑے ہوگئے اور ملکہ کو مخاطب کرکے کہا "میں یہاں پنڈال  موجود ہوں، لیکن منیجمنٹ کہتی ہے کہ اپنے قومی لباس میں ڈائس پر مت آنا ملکہ الیزبتھ نے جواب دیا "اگر یونیورسٹی کا اصول یہی ہے تو پھر میں پنڈال میں آکر آپ کو گولڈ میڈل دیدیتی ہوں. اور یوں طالب علم عطاء محمد خان کو گولڈ میڈل دینے ملکہ اس کی سیٹ پر آئیں. مولوی کی بات تو ہضم نہیں ہوتی، سو ہمارے ذہنی غلام  پچھلے سال اکیاسی برس کی عمر میں انتقال کر جانے والے نواب عظاء محمد خان مرحوم سے ہی کچھ سیکھ لیں ❤This person running a horse with a spear in his hand is Nawab Ata Muhammad Khan.  Who lived on horseback until he was 80 years old.  He looked like a ruthless Nawab, but in practice he was not.  All his life he was a great devotee of horse racing, javelin throwing and Eastern traditions.  In Aitchison and Oxford, the student wore a coat and trousers to the extent of the class, and all his life he wore nothing but a shalwar kameez and a pig.  Khudajdi Pushti was not only Nawab but also son-in-law of Nawab of Kala Bagh.  United States, United Kingdom, France, Germany.  Canada, South Africa and India went to the World Horse Racing Championships in the same situation.   After graduating from Oxford, he became a gold medalist and reached the convocation in the same manner.  The university administration refused to change the dress code on the basis of the dress code.  The management said   "If this is what you are wearing, then you will not be allowed to come on the dice and take the gold medal from the Queen."   Replied   "Don't give me a gold medal, but the dress will stay the same."   Her name was also mentioned among the students who received medals during the ceremony, so she stood up on her seat and addressed the Queen.   "I'm here, but the management says don't come on the dice in your national dress."   Queen Elizabeth answered   "If this is the principle of the university, then I will come to the venue and give you a gold medal."   And so the Queen came to his seat to give the gold medal to the student Ata Muhammad Khan.  Maulvi's words are not digestible, so let our mental slave learn something from the late Nawab Azza Muhammad Khan who passed away at the age of 81 last year.

ہاتھ میں نیزا لئے گھوڑا دوڑاتا یہ شخص نواب عطاء محمد خان ہے   This person running a horse with a spear in his hand is Nawab Ata Muhammad Khan.

 ہاتھ میں نیزا لئے گھوڑا دوڑاتا یہ شخص نواب عطاء محمد خان ہے. جو 80 سال کی عمر تک گھوڑے کی پیٹھ پر رہا. دیکھنے میں ایک سفاک نواب لگتا  تھا مگر عملا ایسا نہیں تھا۔ ساری زندگی گھوڑ دوڑ ، نیزہ بازی اور  مشرقی روایات کے بہت بڑے فداکار رہے۔ ایچی سن اور آکسفورڈ کے زمانہ طالب علمی میں کلاس کی حد تک کوٹ پتلون پہنا اس کے علاوہ پوری زندگی شلوار قمیض اور پگ کے سوا کچھ نہ پہنا۔ خودجدی پشتی نواب ہی نہ تھے بلکہ نواب آف کالا باغ کے داماد بھی تھے۔ امریکہ، برطانیہ، فرانس، جرمنی. کنیڈا،ساؤتھ افریقہ اور بھارت گھوڑ سواری کے عالمی مقابلوں میں شرکت کے لئے گئے تو اسی وضع قطع میں گئے.

 آکسفورڈ سے گریجویشن میں گولڈ میڈلسٹ ہوگئے تو کانوکیشن میں اسی وضع قطع کے ساتھ پہنچ گئے. یونیورسٹی انتظامیہ نے ڈریس کوڈ کا اصول پیش کرکے لباس بدلنے کا کہا تو انکار کردیا. منیجمنٹ نے کہا

 "اگر یہی پہنے رکھنا ہے تو پھر ڈائس پر آکر ملکہ معظمہ سے گولڈ میڈل لینے نہیں دیا جائے گا.

 جواب دیا

 "تو نہ دیں گولڈ میڈل مگر لباس تو یہی رہے گا

 تقریب کے دوران میڈلز لینے والے طلبہ میں ان کا نام بھی پکارا گیا تو یہ اپنی نشست پر کھڑے ہوگئے اور ملکہ کو مخاطب کرکے کہا

 "میں یہاں پنڈال  موجود ہوں، لیکن منیجمنٹ کہتی ہے کہ اپنے قومی لباس میں ڈائس پر مت آنا

 ملکہ الیزبتھ نے جواب دیا

 "اگر یونیورسٹی کا اصول یہی ہے تو پھر میں پنڈال میں آکر آپ کو گولڈ میڈل دیدیتی ہوں.

 اور یوں طالب علم عطاء محمد خان کو گولڈ میڈل دینے ملکہ اس کی سیٹ پر آئیں. مولوی کی بات تو ہضم نہیں ہوتی، سو ہمارے ذہنی غلام  پچھلے سال اکیاسی برس کی عمر میں انتقال کر جانے والے نواب عظاء محمد خان مرحوم سے ہی کچھ سیکھ لیں ❤

This person running a horse with a spear in his hand is Nawab Ata Muhammad Khan.  Who lived on horseback until he was 80 years old.  He looked like a ruthless Nawab, but in practice he was not.  All his life he was a great devotee of horse racing, javelin throwing and Eastern traditions.  In Aitchison and Oxford, the student wore a coat and trousers to the extent of the class, and all his life he wore nothing but a shalwar kameez and a pig.  Khudajdi Pushti was not only Nawab but also son-in-law of Nawab of Kala Bagh.  United States, United Kingdom, France, Germany.  Canada, South Africa and India went to the World Horse Racing Championships in the same situation.

 

   After graduating from Oxford, he became a gold medalist and reached the convocation in the same manner.  The university administration refused to change the dress code on the basis of the dress code.  The management said

 

   "If this is what you are wearing, then you will not be allowed to come on the dice and take the gold medal from the Queen."

 

   Replied

 

   "Don't give me a gold medal, but the dress will stay the same."

 

   Her name was also mentioned among the students who received medals during the ceremony, so she stood up on her seat and addressed the Queen.

 

   "I'm here, but the management says don't come on the dice in your national dress."

 

   Queen Elizabeth answered

 

   "If this is the principle of the university, then I will come to the venue and give you a gold medal."

 

   And so the Queen came to his seat to give the gold medal to the student Ata Muhammad Khan.  Maulvi's words are not digestible, so let our mental slave learn something from the late Nawab Azza Muhammad Khan who passed away at the age of 81 last year.